ڈیجیٹل گردواری کا نظام صوبہ بھر میں نافذ العمل ہے،ترجمان  زرعی کھادوں کی آسان دستیابی اور پرائس کنٹرول کیلئے جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لا یا گیا ہے

ملتان (     )ترجمان محکمہ زراعت پنجاب کے مطابق زرعی کھادوں کی آسان دستیابی اور پرائس کنٹرول کیلئے جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لا یا گیاہے۔اس ضمن میں محکمہ زراعت نے پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کے تعاون سے ڈیش بورڈ تشکیل دیا گیا ہے جس کے ذیعے کھادوں کی ترسیل اور کوٹہ کو مانیٹر کیا جارہا ہے۔ ای فرٹیلائزر یا ڈیجیٹل گرداوری کا نظام یکم اگست 2022 سے صوبہ بھر میں نافذ العمل ہے۔ ترجمان نے مزید بتایا کہ اس نظام کے تحت صوبہ بھر میں کھاد ڈیلرز کے پاس موجود کوٹہ اور سیلرز کے نظام کوشفاف انداز میں مانیٹر کیا جائے گا۔ ڈیجیٹل گرداوری کے ذریعے کاشتکاروں کو گھر بیٹھے ایس ایم ایس کے ذریعے یوریا کھاد کے کوٹہ اور قریبی سینٹر کے متعلق تفصیلات ارسال کی جائیں گی۔اس نظام کے تحت کاشتکار یوریا کھاد کے حصول کیلئے اپنے موبائل فون سے اپنا قومی شناختی کارڈ نمبرureaCNIC لکھ کر 8070 پر ایس ایم ایس کریں گے۔ کاشتکار گرداوری ریکارڈ میں تصحیح و ترمیم کیلئے اپنے قریبی اراضی ریکارڈ سینٹر سے رابطہ کریں گے۔ ڈیجیٹل گرداوری کے نظام سے ہر کاشتکار اپنے مقرر کردہ کوٹہ کے مطابق یوریا کھاد کا  مقرر کردہ قیمت پرحصول کر سکے گااورزرعی کھادوں کی بلیک مارکیٹنگ و زائد قیمت جیسے مسائل پر قابو پانے میں مدد ملے گی۔کھادوں کی عدم دستیابی یا زائد قیمت پر فروخت کے متعلق کاشتکار زرعی ہیلپ لائن 17000-0800 پر بروز سوموار تا جمعہ صبح9 بجے سے شام 5 بجے تک کال کر کے اپنی شکایت درج کروائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں