ن لیگ نے پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری کو ہتک عزت کانوٹس بھجوادیا

مسلم لیگ ن نے تحریک انصاف کے رہنما فواد چوہدری کو ہتک عزت کا نوٹس جاری کردیا۔

مسلم لیگ ن کی جانب سے تحریک انصاف کے رہنما فواد چوہدری کو ہتک عزت کا نوٹس بھجوا دیا گیا ہے۔

مسلم لیگ ن نے تحریک انصاف کے بیان حلفی جمع کرانے والے ارکان پنجاب اسمبلی کو بھی لیگل نوٹس جاری کیا ہے۔ نوٹس شہاب لدین، محمدعامرعنایت اور غضنفرعباس چھینہ کوبھجوائے گئے ہیں۔

نوٹس میں کہا گیا ہے کہ فواد چوہدری نے ووٹوں کی خریداری کا الزام لگایا اور جھوٹے بیان حلفی پر پریس کانفرنس کرکے ساکھ کو نقصان پہنچایا۔ جب کہ اراکین اسمبلی نے جھوٹے بیان حلفی عدالت میں جمع کرائے۔

ہتک عزت کا دعویٰ لیگی رہنماعطاء تارڑ کی جانب سے کیا گیا ہے۔

فواد چوہدری کا بیان

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران فواد چوہدری نے کہا تھا کہ ان کی جماعت کے ایم پی ایز کو پنجاب کی وزارت اعلیٰ کے انتخاب سے قبل 40، 40 کروڑ میں خریدا جا رہا ہے۔

فواد چوہدری نے کہا کہ کل ان کی جماعت کے 3 ارکان سپریم کورٹ میں حلف نامے جمع کرائیں گے کہ کیسے مسلم لیگ ن کے رہنماؤں نے انھیں پیسوں کی پیشکش کی۔

عطا تارڈ کا ردعمل

فواد چوہدری کے پریس کانفرنس پر ردعمل دیتے ہوئے رہنما ن لیگ عطاتارڑ کا کہنا تھا کہ وزیراعلیٰ کے انتخاب میں 2 دن باقی ہیں لیکن پی ٹی آئی نے ابھی سے رونا شروع کردیا، پی ٹی آئی کے رونے کی وجہ پنجاب کے سب سے بڑے ڈاکو کو نامزد کرنا ہے۔

وزیرداخلہ پنجاب عطاتارڑ کا کہنا تھا کہ فوادچوہدری قرآن پرحلف دے دیں کہ پیسے دیے سیاست چھوڑدوں گا۔

تحریک انصاف کے ارکان کے بیان حلفی

پی ٹی آئی کے 3 اراکین اسمبلی نے ہارس ٹریڈنگ سے متعلق مبینہ آفرز پر پارٹی کو بیان حلفی جمع کرائے، بیان حلفی ایم پی اے شہاب الدین، غضنفرعباس چھینہ اورعامرعنایت شاہانی کی جانب سے جمع کرائے گئے۔

بیان حلفی میں کہا گیا ہے کہ وزیرداخلہ پنجاب عطا تارڑ نے لیگی ایم پی اے راحیلہ خادم کے ذریعے رابطہ کیا اور 25 کروڑ روپے کی آفر کی۔ عطا تارڑکی طرف سے کہا گیا کہ اپنا ووٹ وزیراعلیٰ پنجاب کو بیچ دیں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ تینوں ایم پی ایز کو مزید ایم پی ایز خریدنے میں مدد کرنے پر اضافی رقوم کی یقین دہانی کرائی گئی۔ ہمارے دعووں کو کال ریکارڈز کی مدد سے چیک کیا جاسکتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں